وطن نیوز انٹر نیشنل

آئی ایم ایف کے ساتھ پاکستان کا معاہدہ: حفیظ شیخ کے دور میں کیے گئے معاہدے پر اب نظرثانی کی ضرورت کیوں؟

پاکستان کے وزیر خزانہ شوکت ترین کا کہنا ہے کہ پاکستان بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ طے پانے والے موجودہ پروگرام سے نکلے گا نہیں البتہ اس کے طریقہ کار میں تبدیلی لائی جائے گی۔
بدھ کو اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ’موجودہ آئی ایم ایف پروگرام بہت مشکل ہے، آئی ایم ایف نے سخت شرائط رکھیں جن کی سیاسی قیمت ہے، ہم آئی ایم ایف پروگرام سے نہیں نکلیں گے، پروگرام چل رہا ہے البتہ آئی ایم ایف سے کہا ہے کہ کورونا کی تیسری لہر ہے، ہمیں سہولت دینا ہوگی۔‘
وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ ’ہمیں آئی ایم ایف کو ثابت کرنا ہے کہ ہم جو اقدامات کریں گے اس سے پیسے بنا سکیں گے۔‘وزیر خزانہ نے کچھ روز قبل قائمہ کمیٹی میں آئی ایم ایف کے ساتھ طے پانے والے اس پروگرام کی شرائط پر نظرثانی کا کہا تھا جس کے تحت بین الاقوامی مالیاتی ادارے نے پاکستان کو چھ ارب ڈالر کا قرضہ فراہم کرنا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

0