وطن نیوز انٹر نیشنل

برسلز: مقبوضہ کشمیر میں مظالم کے خلاف جمعرات کو برسلز احتجاجی کیمپ لگایا جائے گا


برسلز: مقبوضہ کشمیر میں مظالم کے خلاف جمعرات کو برسلز احتجاجی کیمپ لگایا جائے گا
برسلز (پ۔ر)
کشمیرکونسل ای یو کے زیراہتمام جمعرات ۲۳ ستمبر ۲۰۲۱ء کو یورپی ہیڈکوارٹر برسلز میں یورپی ایکسٹرنل ایکشن سروس (یورپی وزارت خارجہ) کے مرکزی دفتر کے سامنے ایک روزہ احتجاجی کیمپ لگایا جائے گا۔
مظلوم کشمیریوں کی حمایت میں اور بھارتی مظالم کے خلاف یہ ایک روزہ احتجاج پلس شومان برسلز پر دن ساڑھے بارہ بجے شروع ہوگا۔کشمیرکونسل ای یو کے چیئرمین علی رضا سید نے اپنے ایک بیان میں کہاہے کہ اس ایک روزہ کیمپ کا مقصد مقبوضہ جموں و کشمیر میں مظلوم کشمیریوں پر بھارتی مظالم کے خلاف احتجاج کرنا ہے اور ان مظلوموں کی آواز عالمی سطح پر اجاگر کرنا ہے۔
یہ احتجاج بھارتی وزیراعظم نریندرا مودی کے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب سے دو دن پہلے ہورہا ہے۔ وزیراعظم مودی پچیس ستمبر کو جنرل اسمبلی سے خطاب کررہے ہیں۔
علی رضا سید کے بقول، ہم مودی کے اقوام متحدہ سے خطاب سے پہلے دنیا کو بتانا چاہتے ہیں کہ مقبوضہ کشمیر میں ظلم و ستم شدت سے جاری ہے اور بھارت کا سب سے بڑی جمہوریت کا دعویٰ جھوٹا ہے۔ انہوں نے کہاکہ بھارتی مظالم دن بدن بڑھ رہے ہیں اور بھارت ڈومیسائل قوانین میں تبدیلی کرکے جموں و کشمیر میں آبادی کے تناسب کو تبدیل کرنا چاہتا ہے، نئی دہلی کا مقصد مقبوضہ جموں و کشمیر میں اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنا ہے۔
انہوں نے یورپی یونین سے مطالبہ کیا کہ وہ بھارت پر دباؤ ڈالے تاکہ وہ مقبوضہ کشمیرکے مظلوم لوگوں پر ظلم و ستم بند کرے، سیاسی رہنماؤوں سمیت آزادی کے لیے جدوجہد کرنے والے تمام کشمیری قیدیوں کو رہا کرے، قابض افواج کو مقبوضہ کشمیر سے نکالا جائے، کشمیریوں کی نسل کشی و قتل و غارت بند کروایا جائے اور این جی اوز اور انسانی حقوق کی تنظیموں کو جموں و کشمیر آنے کی اجازت دی جائے۔ اس کے علاوہ انسانی حقوق کے بارے میں اقوام متحدہ سمیت دیگر عالمی اداروں کے معاہدوں اور مسئلہ کشمیر کے حوالے سے اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عمل درآمد کروایا جائے۔ جموں و کشمیر میں آبادی کا تناسب تبدیل کرنے کے لیے بھارتی ہتھکنڈوں کو روکنا بھی ضروری ہے۔
علی رضا سید نے کہاکہ یونین کشمیریوں کو ان کا حق خودارادیت دلوانے، مسئلہ کشمیر کے پرامن حل کے لیے بھی کردار ادا کرے، نیز اس تنازعے کے حل کے تمام مراحل میں کشمیریوں کی شمولیت کو یقینی بنایا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

0