وطن نیوز انٹر نیشنل

تقسیم کے 75 برس بعد ہونے والی ملاقات


تقسیم کے 75 برس بعد ہونے والی ملاقات
یہ دونوں بھائی 1947ء میں، جب بچھڑے تھے تو بہت چھوٹے تھے۔ اب 75 برس بعد جب ملے ہیں تو آنکھوں کی چمک تک ماند پڑ چکی ہے اور چہرے جھُریوں سے بھر چکے ہیں۔ ملاقات کی خوشی کے آنسو دونوں کی آنکھوں سے ٹپک رہے تھے۔
بھارت میں رہنے والے سکہ خان 75 برس کے طویل عرصے کے بعد اپنے پاکستانی بھائی صادق خان سے ملے ہیں۔ جب پاکستان اور بھارت کی تقسیم ہوئی تو یہ دونوں بھائی بھی ایک دوسرے سے جدا ہو گئے تھے۔ اس وقت سکہ خان کی کی عمر فقط چھ ماہ تھی۔
اس وقت ہونے والے فسادات میں سکہ کے والد اور بہن قتل کر دیے گئے تھے جبکہ صادق کی عمر دس برس تھی اور وہ پاکستان آنے میں کامیاب ہو گئے تھے
بھارتی پنجاب کے جنوبی علاقے بھٹنڈہ میں ایک پرانے گھر میں رہنے والے سکہ خان بتاتے ہیں، ”میری والدہ اس وقت یہ صدمہ برداشت نہیں کر پائی تھی اور اس نے دریا میں چھلانگ لگا کر خودکُشی کر لی تھی۔‘‘
تقسیم ہند کے وقت دس لاکھ سے زائد افراد مارے گئے تھے۔
سکہ خان کہتے ہیں، ”مجھے گاؤں والوں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا تھا اور پھر کچھ رشتہ داروں نے مل کر میری پرورش کی۔‘‘
بچپن سے ہی سکہ خان کے دل میں تڑپ تھی کہ وہ کسی طرح اپنے خاندان کے واحد زندہ بچ جانے والے بھائی کو تلاش کریں لیکن وہ تمام تر کوششوں کے باوجود ناکام ہی رہے یہاں تک کہ چند برس پہلے ان کے پڑوس میں رہنے والے ایک ڈاکٹر نے صادق خان کی تلاش میں مدد کرنے کی پیش کش کی۔
اس کے بعد پاکستانی یو ٹیوبر ناصر ڈھلوں سے ان گنت کالوں کا سلسلہ شروع ہوا اور سکہ خان اپنے بھائی صادق خان کو تلاش کرنے میں کامیاب ہو گئے۔
سکہ خان کے پاس ماضی کی ایک تصویر بھی ہے، جس میں ان کا پورا خاندان موجود ہے.
آخر کار دونوں بھائی رواں برس جنوری میں کرتارپور راہداری میں ملے۔ پاکستان میں یہ ویزہ فری راہداری سکھ زائرین کے لیے کھولی گئی تھی۔ سن 2019ء میں کھلنے والی یہ راہداری بچھڑے ہوئے خاندانوں کے مابین مفاہمت اور اتحاد کی علامت بن چکی ہے۔
سکہ خان کے پاس ماضی کی ایک تصویر بھی ہے، جس میں ان کا پورا خاندان موجود ہے۔ وہ تصویر ہاتھ میں لیے سکہ خان کا کہنا تھا، ”میں اب بھارت میں ہوں اور میرا بھائی پاکستان میں لیکن ہم دونوں ایک دوسرے سے بے انتہا محبت کرتے ہیں۔ جب ہم پہلی مرتبہ ملے تھے تو گلے لگ کر بہت روئے تھے۔ یہ دونوں ملک لڑتے مرتے رہیں، ہمیں اب بھارت اور پاکستان کی سیاست کی ذرہ برابر پروا نہیں ہے۔‘‘
پاکستانی کسان اور رئیل اسٹیٹ ایجنٹ ناصر ڈھلون 38 سالہ ایک مسلمان ہیں، جو اپنے یوٹیوب چینل کے ذریعے اور پاکستانی سکھ دوست بھوپندر سنگھ کے ساتھ مل کر بچھڑے ہوئے تقریباً 300 خاندانوں کو دوبارہ ملا چکے ہیں۔
ناصر ڈھلوں کا کہنا تھا، ”یہ میرا کوئی آمدنی کا ذریعہ نہیں ہے۔ یہ میرا اندرونی پیار اور جذبہ ہے۔ مجھے ایسا لگتا ہے، جیسے یہ کہانیاں میری اپنی کہانیاں ہیں یا میرے دادا دادی کی کہانیاں، اس لیے ان بزرگوں کی مدد کر کے مجھے ایسا لگتا ہے، جیسے میں اپنے دادا دادی کی خواہشات کو پورا کر رہا ہوں۔‘‘
بھارت اور پاکستان کی نہ صرف زبانیں بلکہ ثقافت بھی ملتی جلتی ہے لیکن یہ دونوں ایٹمی ممالک ایک دوسرے کے دیرینہ دشمن بن چکے ہیں۔
تاہم اس کے باوجود سرحدوں کی قید سے آزاد محبت ایک اچھے مستقبل کی امید ہے۔
بھارت میں رہنے والے سکہ خان 75 برس کے طویل عرصے کے بعد اپنے پاکستانی بھائی صادق خان سے ملے ہیں : اسی طرح بلدیو سنگھ اور گرومکھ سنگھ کے لیے اپنی سوتیلی بہن ممتاز بی بی کو گلے لگانے میں کوئی ہچکچاہٹ نہیں تھی۔ ممتاز بی بی ابھی ایک بچی ہی تھیں، جب وہ فسادات کے دوران اپنی متقول ماں کے پاس پڑی ملی تھیں اور ایک مسلمان جوڑے نے انہیں گود لے لیا تھا۔
ان کے والد کو لگا کہ اس کی اہلیہ اور بچی ہلاک ہو چکے ہیں اور انہوں نے اپنی اہلیہ کی بہن سے شادی کر لی، جو اس وقت رواج تھا۔
بلدیو سنگھ اور گرومکھ سنگھ کو ڈھلوں کے یو ٹیوب چینل سے ہی پتا چلا تھا کہ ان کی بہن زندہ ہے۔ یہ دونوں بھی رواں برس کرتار پور میں اپنی بہن سے پہلی مرتبہ ملے تھے۔
65 سالہ بلدیو سنگھ بتاتے ہیں، ”جب ہم نے اپنی بہن کو پہلی بار دیکھا تو ہماری خوشی کی کوئی انتہا نہ رہی۔ اس سے کیا فرق پڑتا ہے کہ وہ مسلمان ہے؟ ہماری رگوں میں ایک خون دوڑ رہا ہے۔‘‘
صوبہ پنجاب کے شہر شیخوپورہ نے رہنے والی ممتاز بی بی بھی اتنی ہی پرجوش تھیں۔ وہ بتاتی ہیں، ”جب میں نے (اپنے بھائیوں کے بارے میں) سنا تو میں نے سوچا کہ یہ اللہ تعالیٰ کی مرضی ہے۔ یہ خدا کی طرف سے ہے اور ہمیں اس کی رضا قبول کرنی چاہیے۔ پھر مجھ پر کرم ہوا اور میں اپنے بھائیوں سے ملی۔‘‘
ممتاز بی بی کا کہنا تھا، ”بچھڑے ہوئے لوگوں کو ملنا بہت ہی خوشی کی بات ہے۔ میری جدائی ختم ہو گئی ہے، اس لیے میں بہت مطمئن ہوں۔‘‘
ا ا / ع ب (اے ایف پی)

اپنا تبصرہ بھیجیں

0