پاکستانی سمندری حدود میں داخلے کیلئے پیشگی اجازت لازمی قرار

وفاقی حکومت نے میری ٹائم زونز ایکٹ 2020 کی منظوری دے دی، جس کے بعد غیر ملکی جنگی، ایٹمی بحری جہازوں کے پاکستانی حدود میں داخلے کے لیے پیشگی اجازت لازمی قرار دے دی گئی ہے۔
پاکستان نے سمندری حدود میں ملکی سیکیورٹی اور سالمیت کے حوالے سے قانون سازی کرلی، دستاویز کے مطابق پاکستان نے غیرملکی جنگی اور ایٹمی بحری جہازوں کے اس کی سمندری حدود میں داخلے کی پیشگی اجازت لازمی قرار دےدی ہے۔پاکستان کی سمندری حدود میں سب میرینز، دیگر واٹر وہیکلز کا داخلہ بھی وفاقی حکومت کی پیشگی اجازت سے ہوگا۔دستاویز کے مطابق پاکستان کے دفاع پر معلومات اکھٹی کرنے اور اسلحہ استعمال کرنے پر کارروائی ہوگی۔دستاویز کے مطابق پاکستانی حدود میں کرنسی، افراد کی لوڈنگ، ان لوڈنگ، ریسرچ اور سروے پر پابندی عائدکی گئی ہے۔
میری ٹائم زونز ایکٹ 2020ء کی خلاف ورزی کے مرتکب بحری جہاز قبضے میں لےکر قانونی کارروائی کی جائے گی اور اس پر 5 سال قید اور بھاری جرمانہ عائد کیا جائے گا۔دستاویز کے مطابق ملکی خود مختاری کا اطلاق سمندر، سمندری فرش، ذیلی مٹی پر موجودہ وائی حدود پر ہوگا۔وفاقی حکومت تاریخی پانیوں سے متعلق حدود کا تعین کرے گی جبکہ بیس لائن کے زمینی اطراف موجود تمام پانیوں کو پاکستان کا داخلی پانی قرار دیا جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں