گورنر پنجاب چوہدری محمد سرورانٹرویو بیان

گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور نے کہا ہے کہ گزشتہ دو برسوں میں پی ٹی آئی حکومت کی کارکردگی مثالی رہی ، ملک کو دیوالیہ پن سے بچانا ، آئی ایم ایف کی سخت شرائط پر دوبارہ مذاکرات کرنا ، ایف اے ٹی ایف میں بلیک لسٹ ہونے سے آزاد کرانے کےلئے کاوشےں ، سرحدوں پر خطرات کو ختم کرنا اور بین الاقوامی سطح پر ملک کی ساکھ اور امیج کو بہتر بنانا ، پنجاب میں اوورسیز کمیشن کا قیام پی ٹی آئی حکومت کی نمایاں کارنامے ہیں۔
انٹرویو کے دوران پی ٹی آئی حکومت کی دو سالہ کارکردگی کے بارے میں بتائی ۔انہوں نے مزید کہا کہ تمام معاشی ماہرین نے ہماری حکومت کو بدترین حکومت قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ اس حکومت سے عوام کو کوئی اچھے کی امید نہیں لیکن پی ٹی آئی کی حکومت نے تمام چیلنجوں کا مقابلہ کیا اور بین الاقوامی دوستوں کی مربوط کوششوں اور تعاون کے ذریعے کامیابی حاصل کی،
گورنر نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ حکومت کرنٹ اکاﺅنٹ خسارے کو کم سے کم کرنے ، پاکستان اسٹاک ایکسچینج مارکیٹ کو مضبوط بنانے اور کورونا وائرس کی وباءکو ناکام بنانے میں بھی کامیاب رہی‘انہوں نے کہا کہ”پاکستان کا کرنٹ اکاونٹ خسارہ 20 ارب ڈالر تھا لیکن پی ٹی آئی کی حکومت نے اسے کم کرکے صرف 3 ارب ڈالر کردیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی اسٹاک مارکیٹ دنیا کی چند سٹاک مارکیٹوں میں سے ایک ہے جو کورونا وائرس کے دوران بھی مستحکم رہی۔
انہوں نے مزید کہا کہ ملک کی بینکاری تاریخ میں پہلی بارمارٹگیج کی پالیسی مرتب کی گئی جس میں مکانات کی تعمیر کے لئے 5 فیصد پر قرضے فراہم کیے گئے جبکہ معاشی سرگرمیوں کو بڑھانے اور عوام کو ریلیف کی فراہمی کی غرض سے سود کی شرح 13.25 فیصد سے کم کرکے 7 فیصدکی گئی‘ کوویڈ 19 وبائی امراض کے بارے میں چوہدری محمد سرور نے کہا کہ ہمارے پنڈتوں نے کوویڈ 19 وبائی بیماری کے نتیجے میں صحت کے نظام اور معیشت کے خاتمے کی پیش گوئی کی تھی لیکن پی ٹی آئی کی حکومت نے اس خوفناک چیلنج پر قابو پالیا۔ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اللہ تعالیٰ کی رحمت کے بعد یہ وزیر اعظم عمران خان کی دور اندیشی تھی انہوں نے کہا کہ دنیا ایک گلوبل ویلیج ہے‘ میں نے ہمیشہ دوسرے ممالک کے سیاستدانوں سے رابطے رکھے جس کی وجہ سے ملک کو بہت زیادہ فائدہ ہوا صرف جی ایس پی پلس سٹیٹس کی وجہ سے ملک کو گزشتہ 7 سالوں میں 20 ارب ڈالر سے زائد آمدنی ہوئی‘گورنر نے کہا کہ آج کی دنیا میں تعلقات بہت زیادہ اہمیت رکھتے ہیں اور ہمارے سیاستدانوں کو غیر ملکی شخصیات کے ساتھ اچھے تعلقات کو فروغ دینے کی ضرورت ہے ، علاوہ ازیں غیر ملکی دوروں کے موقع پرہماری پارلیمنٹ کے ممبران ، کانگریس کے لوگوں سے ملاقات پاکستان کے سافٹ امیج ، مسئلہ کشمیر کی عکاسی کرنے میں مدد فراہم کرتی ہے،
گورنر نے کہا کہ میں نے ہمیشہ بیرون ملک مقیم پاکستانی برادری کو تلقین کی کہ وہاں سیاست میں حصہ لیں کیونکہ صرف اقتدار کی راہداریوں کے ذریعے ہی ہم اپنا مقام حاصل کرسکتے ہیں جیسا کہ میں نے بطور رکن برطانوی پارلیمنٹ حاصل کیا، انہوں نے کہا کہ ہمیں راستہ تلاش کرنے کی ضرورت ہے ،خطے میں امن کے قیام کے حوالے سے اپنے کردار کا ذکر کرتے ہوئے گورنر نے کہا کہ کشمیری بدترین ریاستی دہشت گردی کا شکار تھے اور اس وقت عالمی برادری کا کردار اخلاقی ذمہ داری ہے‘ہمیں بین الاقوامی برادری کو باور کرانا چاہئے کہ ہندوستان ایک ایسا ملک ہے جس نے اقوام متحدہ کے فلور پر کی جانے والی رائے شماری کی خلاف ورزی کی ہے‘انہوں نے برطانیہ کے ایک پارلیمنٹیرین کی حیثیت سے اپنے 37 سال کے تجربے کی روشنی میں دعویٰ کیا کہ جو پاکستان میں بین المذاہب ہم آہنگی پر کام ہو رہا ہے ، دنیا کے کسی اور حصے میں اس کی مثال نہیں ملتی‘
چوہدری محمد سرور نے کہا کہ میں نے اپنے تمام کیریئر میں مساوی حقوق کے لئے کام کیا اور مجھے یقین ہے کہ جب تک ہم خواتین کو مردوں کے برابرنہیں لائیں گے اس وقت تک کوئی بھی معاشرہ ترقی نہیں کرسکتا ، انہوں نے مزید کہا کہ لڑکیاں پاکستان کی تمام یونیورسٹیوں میں لڑکوں سے بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کر رہی ہیں اور آنے والے دنوں میں ملکی ترقی میں خواتین کابہتر کردار نظر آرہا ہے‘
انہوں نے مزید کہا کہ اپوزیشن جماعتوں نے ماضی میں جنوبی پنجاب صوبہ کے قیام کے لئے کچھ نہیں کیا لیکن جس دن ہم نے اس پر کام شروع کیا مسلم لیگ (ن) نے یہ منتر شروع کیا ہے کہ بہاولپور کو بھی ایک صوبہ بنایا جائے‘گورنر نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی کو جنوبی پنجاب صوبہ کی اسمبلی میں بات کرنی چاہئے اس حقیقت کے باوجود کہ اس کو پارلیمنٹ میں اکثریت حاصل نہیں اگر پارلیمنٹ میں بل کو مسترد بھی کردیا جاتا ہے تو کم از کم صوبے کے لوگ یہ جان سکیں گے کہ جنوبی پنجاب کے لئے الگ صوبے کے معاملے پر مسلم لیگ (ن) اور دیگر جماعتیں کتنی سنجیدہ ہیں‘
گورنر نے کہا کہ ان کے اقدام پر پنجاب میں اوورسیز کمیشن قائم کیا گیا ، انہوں نے مزید کہا کہ جبکہ لاہور ہائیکورٹ نے او پی ایف کیسوں کو تیزی سے نمٹانے کیلئے ججوں کی تقرری کی ہے‘انہوں نے کہا کہ اتحادی پی ٹی آئی کی حکومت کے ساتھ ہیں تاہم شکایات ہمیشہ موجود رہتی ہیں،ایک سوال پر گورنر نے کہا کہ ہم یونیورسٹیوں کو بزنس ہب بنانا چاہتے ہیں کہ یونیورسٹیوں کو انڈسٹری سے منسلک کر دیا جائے۔
گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور نے تقریب سے اپنے خطاب میں کہا کہ پورے پنجاب میں صاف پانی کے پلانٹس لگائیں گے،پہلے مرحلے میں 50لاکھ لوگوں کو صاف پانی کی فراہمی کو یقینی بنایاجارہاہے، وہ وقت دور نہیں جب پنجاب کے تمام لوگوں کے پاس ہیلتھ کارڈ ہوں گے، ہم ہسپتالوں کےانفرااسٹرکچر کو بہتر بنانے کے اقدامات کر رہے ہیں اور احساس پروگرام کے تحت بغیر سیاسی تفریق کے اربوں روپے تقسیم کے جارہے ہیں۔

گورنر پنجاب کی سب سے بڑی خوبی یہ ہے کہ اُن میں کسی قسم کا حسد اور تعصب نہیں ہے۔

اگر ہمارے تمام سیاستدان چوہدری سرور کی طرح مہذب اور با اخلاق ہو جائیں تو پاکستان سے آدھے فساد اور شر ویسے ہی ختم ہو جائیں

گور نر پنجاب نے کہا کہ اداروں کو سیاست میں نہیں گھسیٹنا چاہیے، اداروں کی مضبوطی ملک کی مضبوطی ہے،

مستقبل میں صوبے میں موجود تمام یونیورسٹیز کو سولر انرجی پر منتقل کر دیا جائے گا

اوورسیز پاکستانی ملک وقوم کا سر مایہ ہیں ان کے مسائل حل کرانا اولین ترجیحات میں شامل ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں